mukaalama-Khuda aur banda – josh malihabadi

For word meanings and explanatory discussion in English click on the tabs marked “Roman” or “Notes”.

Recitation

مکالمہ ۔ بندہ و خدا ۔ جوشؔ ملیح آبادی

خدا                                                             بندہ

۱

شاعر، ترے نصیب میں خُلدِ بریں نہیں                 مے خوار تشنۂ لبن و انگبیں نہیں

بھڑکا حریمِ قلب میں عشق و جنوں کی آگ           عشق و جنوں کی آگ خیال آفریں نہیں

۲

دل کی طرف رجوع ہو اے کشتۂ دماغ              دل طفلِ کم نگاہ ہے، آفاق بیں نہیں

مومن بہ شیوہ ہائے تقشُّف ہے سرفراز                 مُلحد بھی بر بِنائے تجسُّس لعیں نہیں

۳

کیا دل نشیں نہیں ہیں مقالاتِ مقبلاں               بے شنہ دل نشیں ہیں مگر سر نشیں نہیں

اُٹھ غیب کی زمین پہ رکھ دین کی بنا              مبنی جو غیب پر ہو وہ افسوں ہے دیں نہیں

۴

اقوال پر نگاہ کر افکار پر نہ جا                           یہ خاکسار مولوی عبدالمتیں نہیں

رکھ دے حریمِ قُدس کے در پر سرِ نیاز               جُھک جائے ہے دلیل یہ ایسی جبیں نہیں

۵

وجدان کی شراب سے چھلکا سُبوئے دل                          بہرِ شرابِ وہم مرا ساتگیں نہیں

فطرت میں ہے کجی تو اُسے مستقیم کر                اِنساں تو کیا، یہ طاقتِ رُوح الامیں نہیں

۶

دیدار کی تڑپ ہے تو عرشِ بریں کو دیکھ                        کیا جلوہ گاہِ ناز یہ فرشِ مبیں نہیں

اچھا تو آسماں کی طرف ہی نظر اُٹھا                   فِدوی کے اقتدرا میں اب تک زمیں نہیں

۷

ہاتوں سے دیکھ حبلِ متیں چھوٹنے نہ پائے             محکم تر از خِرد کوئی حبلِ متیں نہیں

آ، سُوئے نور و طور و طہور و قصور و حور               میں شہر اِبلہاں کا اِلہٰی مکیں نہیں

۸

ایقان ہے نگینِ سلیمانِ زندگی                          ایقان اِک فریبِ نگیں ہے، نگیں نہیں

مُرغانِ بے نوا پہ جھپٹ نہرِ مشقِ ناز                   اِنساں ہوں، عُقابِ لیم و لعیں نہیں

۹

میں تجھ پہ خشم گیں ہوں، اسیرِ دلیل و عقل                     حکمت پناہ یہ روِشِ نکتہ بیں نہیں

دوزخ تیر مقام ہے اے عبدِ بے الہٰ                      نیّت میری بخیر ہے، میں سہم گیں نہیں

۱۰

ہوگی سزا بروزِ جزا با وُجودِ جبر                         سنتے ہیں آسماں پہ یہ رسمِ زمیں نہیں

کاشانہ خیال میں شمع یقیں جلا                      حکمت میں ڈوب کر جو نہ اُبھرے یقیں نہیں

۱۱

بندے، نظامِ دہر سے شاید حزیں ہے تُو                       ہاں مجھ کو اعتراض ہے لیکن حزیں نہیں

کانوں سے رِشتہ جوڑ عنانِ دلیل توڑ                         وہ مردہ ہے جو گرمِ چنان و چنیں نہیں

۱۲

کیا دل مچل رہا ہے مرے قرب کے لئے                            اللہ رے عارِفانہ تجاہل، نہیں نہیں

اے جوشؔ دل میں ہے کہ جگر میں، کہاں ہے درد                 اے شاہدِ بتونِ دو عالم کہیں نہیں

 

 

Click here for background and on any passage for word meanings and explanatory discussion. Background
1
xxxxx meaningsanddiscussion
2
xxxxx meaningsanddiscussion
3
xxxxx meaningsanddiscussion
4
xxxxx meaningsanddiscussion
5
xxxxx meaningsanddiscussion
6
xxxxx meaningsanddiscussion
7
xxxxx meaningsanddiscussion
8
xxxxx meaningsanddiscussion
9
xxxxx meaningsanddiscussion
10
xxxxx meaningsanddiscussion

 

 

 

 

 

 

Key Search Words:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *